اہم خبریںسیاسی

اشرف غنی ایک طرف الزامات تو دوسری طرف تعاون مانگ رہے ہیں

تعجب ہوا افغان حکومت نے اپنا سفیر بلا لیا،افغانستان کو اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنی چاہئیے،وزیراعظم کی ہدایت پر افغان سفیر کی بیٹی کا مقدمہ درج کیا گیا۔وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا بیان

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ایک طرف اشرف غنی ہم پر الزامات لگا رہے ہیں تو دوسری طرف تعاون مانگ رہے ہیں۔دو شنبے میں بھی افغان صدر نے غیر مناسب بیان دیا۔نجی ٹی وی چینل سے گفتگو میں انہوں نے مزید کہا کہ تعجب ہوا افغان حکومت نے اپنا سفیر بلا لیا۔وزیراعظم کی ہدایت پر افغان سفیر کی بیٹی کا مقدمہ درج کیا گیا۔

افغانستان کو اپنے فیصلے پر نظرثانی کرنی چاہئیے۔وزیرخارجہ نے کہا کہ پاکستان واقعے کی مکمل تحقیقات کر رہا ہے۔کل صبح 10 بجے افغان ہم منصب سے بات کروں گا۔اچانک افغان سفیر کی طلبی پر تشویش ہے۔جذبات میں کوئی فیصلہ نہیں کرنا چاہئیے۔ہمیں امید تھی کہ افغان سفیر ہم سے تعاون کرے گا۔افغان سفیر یہاں رہیں گےاور تحقیقات میں تعاون کریں گے۔

دوسری جانب افغان حکومت کی جانب سے اپنا سفارتی عملہ واپس بلائے جانے کے فیصلے کو پاکستان نے افسوس ناک قرار دیا ہے۔  ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق افغان حکومت کا اپنے سفیر اور سفارتی عملےکو واپس بلانےکا فیصلہ بدقسمتی اور افسوس ناک ہے۔

ترجمان کا کہنا ہےکہ افغان سفیر کی بیٹی کےاسلام آبادمیں مبینہ اغواکی تحقیقات جاری ہیں، وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر معاملےکی تحقیقات اعلٰی سطح پر ہو رہی ہیں۔ ان کا کہنا ہےکہ افغان سفیر، ان کے خاندان اور دیگر سفارتی عملے کی سیکیورٹی بڑھادی ہے، سیکرٹری خارجہ نے آج افغان سفیر سے ملاقات بھی کی اور افغان سفیر کو معاملے پر حکومتی اقدامات سے آگاہ کیا، سیکرٹری خارجہ نے افغان سفیرکو مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان افغان حکومت سے فیصلے پر نظر ثانی کی امید رکھتا ہے۔خیال رہے کہ افغان صدر اشرف غنی نے اسلام آباد سے اپنے تمام سفارت کاروں کو ملک واپس بلا لیا ہے۔اس حوالے سے وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے حال ہی میں اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ افغان سفیر کی بیٹی کا کیس 72 گھنٹے میں حل ہوجائے گا اور جلد تمام تفصیلات سامنے آجائیں گی کہ اس معاملے میں کون ملوث ہیں ، ابتدائی طور پر 3 ڈرائیورز سے تفتیش مکمل کرلی گئی ، واقعے کی ایف آئی آربھی درج ہوچکی ہے ، اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ 16 جولائی کو اسلام آباد میں افغان سفیر کی بیٹی کے ساتھ ہونے والے معاملے کی تحقیقات جاری ہیں اور یہ کیس 72 گھنٹے میں حل ہو جائے گا۔

اب تک کی تحقیقات سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ افغان سفیر کی بیٹی گھر سے پیدل نکلی اور ٹیکسی سے کھڈا مارکیٹ پہنچی ، جیسے جیسے تحقیقات کر رہے ہیں کڑیاں مل رہی ہیں ، افغان سفیر کی بیٹی کے کھڈا مارکیٹ سے راولپنڈی جانے کی تحقیقات کر رہے ہیں ، اغوا کاروں کو گرفتار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں

Zaid Mehmood

جوانوں کو مری آہ سحر دے پھر ان شاہین بچوں کو بال و پر دے خدایا آرزو میری یہی ہے مرا نور بصیرت عام کر دے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button